HomeArticleجمو ں کسشمیر سے آرٹکل 370 ہٹا ے جانے کے بعد...

جمو ں کسشمیر سے آرٹکل 370 ہٹا ے جانے کے بعد سے اب تک کے حالات


آرٹیکل 370 کو ہتھے آج ہو گئی دوسری سالگرہ

چسنچل پاٹھک

جموں – کشمیر میں گزشتہ کچھ برسوں سے جس طرح کے حالات بنے ہوئے تھے ،اسے دیکھتے ہوئے وزیر اعظم نریندر مودی حکومت نے پانچ اگست 2019 کو آرٹیکل 370 کو رد کرنے کا جو اہم فیصلہ لیا ،وہ ملک کی یکجہتی اور اتحاد کے لئے اہم تھا ۔آرٹیکل 370 کو رد کے ہوئے یہ دوسری سالگرہ ہے۔ اس وقت مرکزی حکومت کا پورا دھیان جمو اور کشمیر کے مظلوم طبقہ کی طرققی اور انکے فایدے کی طرف ہے۔ حلقه میں پازیٹو بدلاؤ تیزی پر ہے۔
اسج کشمیر میں بچوں کے ہاتھوں میں بند وخ کی جگہ کریکٹ بیٹ ہیں۔ کشمیر میں اب نؤ جوانو کے رول موڈل بدل رہے ہیں۔ یہی وجہ ہے کی ڈاکٹر، انجینور اور سول سروسس مے نو جوانوں کی تعداد میں اضافہ ہوا ہے۔ وہاں کے نو جوانوں میں اپنوں کے لئے کچھ کسرنے کے لئے جزبہ پیدا ہوا ہے۔
وو حکومت کی اسکیموں کا فایدہ اٹھاتے ہوئے سماج کو کچھ دینے کی کوشش کر رہے ہیں۔ حکومت کی ابٹک 54میں سے 28 اسکیمیں مکمّل ہو چکی ہیں، کیونکی جمموں کشمیر میں ترققی اور بنیادی ڈھانچے حکومت کی بدی ترجیح ہے ۔وہاں کی کوتین خواتین کو مظبوط بنانے کے لئے کشمیر مے حکومت کی کوششیں جاری ہیں۔ اسی کی جیگتی جاگتی مصال پوجا دیوی ہیں، جنہوں نے جموں کٹھوا روڈ پر بس چلاکر پہلی خواتین ڈرائیور کا خطاب حاصل کیا ہے۔
وزیر اعظم مہارت اسکیم نے خوا تین کی ترققی میں ایک
نیا ورق جوڈا ہے۔ اس اسکیم کا
فایدہ اٹھاتے ہوئے وہا کی خواتین اپنے روزگار کے ذریع مضبوط بن رہی ہیں۔ یہی نہیں فوج بھی حکومت کے تخلیقی کاموں میں مدد کر رہی ہے ۔فوج اپنے ورک شاپ کے ذریع خوا تین کو خود پر منحصر بنانے میں لگی ہی ہے۔
خواتین سلائی ،کڑھائی ور بنائی کے کاموں میں مہارست رثختی ہیں ،اسی کو پیش نظر رکھتے ہوئے فوج انھیں ٹیکنولوجی کا علم دے رہی ہے۔ جس سے انھیں اپنے کام کو بڑھانے اور خود پسر منحصر ہونے کا موقع فرہام ہو گا ۔خوا تین کو چھوٹے دھندوں کے لئے سلائی مشین دی گئی ہے۔ حکومت کا یہ ماننا ہے کے ایسی کاوشوں سے فوج اور عوام کے رشتے سدھرنے کے ساتھ ساتھ کشمیری خواتین کے بہتر مستقبل کے لئے زیادہ کار گار گار ثابت ہونگے۔ جموں اور کشمیر میں حکومت نے پنچایتوں کو انکے حقوق دے اور بجٹ مھےیا مھییا کروایا ۔پنچایتوں کو مضبوط کرتے ہوئے انتظامیہ کے 21 موضوع کو پنچایتوں کو دے دیا۔ حکومت نے تقریبن 1500سو کرود کروڈ روپے سیدھے بینک اکاونٹ میں ڈال کر جموں کشمیر کے گاوں کی ترقی کا راستہ کھول دیا ہے۔ حکومت میں 50000 خاندانوں کو صحت بما بیمہ کے تحت کور کیا اور 10000نو جوانوں کو روزگار اسکیم سے جوڑا ہے۔
حکومت نے 2024 ٹک ھر گھر میں نل کے ذریع پانی بہوچانے کا ٹارگٹ رکھا ہے۔
اسکا اعلان حکومت نے اپنے بجٹ میں بھی کیا ہے ۔حکومت نے سبھی کو پانی مھییا کروانے کے لئے اس کام کو مشن کے طور پر لیا ہے۔ ای ا ی ٹی جموں نے اپنے احاطے میں تعلیم کا کام شرو ع کر دیا ہے ۔
امس کے تعمیری کام کا انار گرتیوں بھی ہو چکا ہے ۔
8۔45کلومیٹر بنیحال سرنگ بن کر ٹسیار ہے۔ 2022تک کشمیر کی واد یو ور ریلوے سے جوڑنے کی اسکیم ہے ۔
جموں کشمیر کی زمیں پر اب زنعتی تر قی کی لکیر ابھسرنے لگی ہے ۔
جموں کسشمر میں ریل اسٹیٹ کے لحاظ سے بدی امیدیں جاگی حسن ،یہاں سیاحت ،سینیما سیاحت ، باغوانی ،فصل کا انتظام ،اگریکلچر، پھلوں کی پروسیسنگ کا انتظام، ریشم ،صحت ،فارما سیوٹیکل ،پیداوار ،ای ٹی، توانائی ،بنیادی ڈھانچہ ،ریل اسٹیٹ، ھینڈ لوم ،دستكاری ،تعلیم کے حلقوں میں لوگوں کے ذریع رقم لگاے جانے کے راستے کلنے کی امید جاگی ہے۔ حکومت نے یہ جو ماحول بنایا ہے ،اسسے یہ محسوس ہورہا ہے کی مستقبل میں جموں کشمیر زنعتی انقلاب کی مصال بنگا ۔مودی حکومت کے کام شفافیت کی طرح ہونے کی وجہ سے حکومت کے کاموں کی نمائش دیگر کاموں ور کے جانے والے خرچ اور حکومت کی کارگزاری کے بارے میں اتتیلہ موصول ہوتی ہے ،جو ایڈ منسٹریشن میں جواب دیہی تے کرتی ہے اور گیر اخلاوی سر گرمیوں جیسے بدعنوانیوں پر روک لگاتی ہے۔ شفافیت اور جواب دیہی نہ صرف لوگوں کو اور قریب کرتی ہے بلکی فیصلہ لینے کے عمل میں انھیں برابر سے اہم حصّہ دار بھی بناتی ہے۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

Must Read